spot_img

ذات صلة

جمع

علیم خان کا جنرل فیض حمید پر الزام، جہانگیر ترین نے غلام سرور خان کا خیرمقدم کیا

ٹیکسلا میں جمعرات کو استحکام پاکستان پارٹی کا جلسہ...

تحریک انصاف کی تین سالہ حکومت کی ہوشربا کرپشن

پاکستان تحریک انصاف کی تین سالہ حکومت کے دوران...

میانوالی میں دہشتگرد حملے میں استعمال ہونے والے اسلحے کی تفصیلات سامنے آ گئیں

میانوالی میں 4 نومبر کو پاکستان ائیرفورس کے ٹریننگ...

اسحاق ڈار نے جنرل باجوہ سے اختلافات کی وجہ مالی مسائل بتائی

سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے سابق آرمی چیف...

نگران حکومت نے فی یونٹ بجلی 3 روپے 28 پیسے مہنگی کرنے کی منظوری دے دی

اسلام آباد: 2 اکتوبر 2023 (نیپرا) – نگران حکومت نے وفاقی وزیر توانائی کے اختیارات استعمال کرتے ہوئے فی یونٹ بجلی 3 روپے 28 پیسے مہنگی کرنے کی منظوری دے دی۔

نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی (نیپرا) نے 22 ستمبر 2023 کو سہ ماہی ایڈجسٹمنٹ کی مد میں فی یونٹ بجلی 3 روپے 28 پیسے مہنگی کرنے کی منظوری دی تھی، لیکن اس فیصلے پر وفاقی حکومت کی منظوری درکار تھی۔

حکومت کی منظوری کے بعد نیپرا نے بجلی مہنگی کرنے کا نوٹیفکیشن جاری کردیا۔ نوٹیفکیشن کے مطابق بجلی صارفین کو اکتوبر 2023 سے مارچ 2024 تک اضافی ادائیگیاں کرنا ہوں گی۔

اس فیصلے سے تمام صارفین متاثر ہوں گے، بشمول گھریلو، تجارتی اور صنعتی صارفین۔

حکومت کا کہنا ہے کہ بجلی کی قیمتوں میں اضافے کی ضرورت ہے تاکہ بجلی کی صنعت کو مالی استحکام حاصل ہو سکے۔

اپوزیشن جماعتوں نے حکومت کی اس فیصلے کی مذمت کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ فیصلہ غریبوں پر مزید بوجھ ڈالے گا۔

بجلی کی قیمتوں میں اضافے کا اثر

بجلی کی قیمتوں میں اضافے سے عام آدمی کی زندگی پر بہت اثر پڑے گا۔ گھریلو صارفین کے لیے بجلی کی قیمتوں میں اضافے سے ان کے بجٹ پر بوجھ بڑھے گا۔ تجارتی اور صنعتی صارفین کے لیے بجلی کی قیمتوں میں اضافے سے ان کی پیداواری لاگت بڑھے گی، جس سے ان کی مصنوعات اور خدمات کی قیمتیں بڑھ سکتی ہیں۔

حکومت کو بجلی کی قیمتوں میں اضافے کے اثرات کو کم کرنے کے لیے اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔ ان اقدامات میں گھریلو صارفین کے لیے مراعات دینا اور بجلی کی پیداوار میں کمی کو کم کرنا شامل ہے۔

spot_imgspot_img